کراچی: پولیس کا گرفتار ملزم کو جان سے مارنے کی دھمکی دے کر تیس لاکھ روپے رشوت وصول کرنے کا انکشاف

کراچی: پولیس کا گرفتار ملزم کو جان سے مارنے کی دھمکی دے کر تیس لاکھ روپے رشوت وصول کرنے کا انکشاف

نیو کراچی صنعتی ایریا پولیس نے گرفتار ملزم کو مار دینے کے خوف سے ڈرا کر منشیات فروش کے اہل خانہ سے 30 لاکھ تاوان لے لیا، پولیس نے ہمارے بیٹے کی زندگی کا لالچ دے کر 30 لاکھ تاوان لیا ہے۔اہل خانہ کا دعوی

رپورٹ:احسان یونس کراچی(وضاحت نیوز)کراچی پولیس کی بڑی تاوان وصولی کی واردات خفیہ ویڈیو وضاحت نیوز نے حاصل کر لی،30لاکھ روپے کے عیوض منشیات فروش کو فل فرائی نہ کرنے اور رہائی کے عیوض وصول کئے،اہل خانہ کی جانب سے لین دین کی بنائی گئی خفیہ ویڈیو وضاحت نیوز نے حاصل کر لی،پولیس نے 30لاکھ روپے کی وصولی کے بعد 10 کلو منشیات کے ہمراہ ضلع وسطی سے گرفتاری ظاہر کردی،اہل خانہ نے اغواء برائے تاوان کے مقدمے کیلئے عدالت سے رجوع کرنے کافیصلہ کرلیا۔

ذرائع کے مطابق کراچی کا ضلع وسطی وردی میں ملبوس اغواء برائے تاوان کے کارندوں کی آماجگاہ بن گیا،تاوان کی بڑی رقم کی وصولی کی خفیہ ویڈیو وضاحت نیوز نے حاصل کرلی،ذرائع نے بتایا کہ نیو کراچی صنعتی ایریا پولیس نے تاوان کی بڑی رقم پر ملزم کو سہولیات فراہم کی ہیں’30 لاکھ روپے فل فرائی نہ کرنے پر رقم ادا کی گئی،بدنام زمانہ منشیات فروش اقبال عرف حضور بخش کو سرجانی سے پولیس کی بھاری نفری نے حراست میں لیا،اہل خانہ کے مطابق 27مئی کی شب سرجانی کے عبدالرحیم گوٹھ سے حراست میں لے کر نامعلوم مقام پرمنتقل کیاگیا،تین روز حبس بے جا میں رکھا گیا30لاکھ روپے تاوان کی رقم کی ادائیگی کے بعد مبینہ جعلی مقدمہ درج کرلیاگیا،اہل خانہ نے الزام عائد کرتے ہوئے بتایا کہ نیو کراچی صنعتی ایریا پولیس نے اقبال عرف حضور بخش کے خلاف مقدمہ نمبر 503/2021سب انسپکٹر ذوالفقار قریشی کی مدعیت میں درج کیا،ایف آئی آر متن میں دیگر کئی اہلکاروں کابھی ذکر کیاگیا ہے،اقبال عرف حضور بخش کو 27مئی کی رات سرجانی ٹاؤن عبدالرحیم گوٹھ سے 2 پولیس موبائل اور ایک پرائیویٹ کار میں حراست میں لیا’اہل خانہ نے مزید بتایا کہ31 مئی کو 10 کلو منشیات کے ہمراہ مبینہ جعلی مقابلے میں 30 لاکھ روپے تاوان کی وصولی کے بعد گرفتاری ظاہر کی گئی،سب انسپکٹر ذوالفقار قریشی’سرجانی تھانے میں تعینات اے ایس آئی ملک محمد عامر’ نیو کراچی انڈسٹریل ایریا میں تعینات ربی اللہ’جمن’ لطیف اور بدنام زمانہ پولیس اہلکار ولید آپریشن کو لیڈ کرتا رہا،ذرائع کے مطابق 30 لاکھ روپے تاوان تین قسطوں میں نیو کراچی اللہ والی چورنگی اور سرجانی تھانے کے باہر کار میں وصول کیا گیا، جبکہ رقم وصولی کامرکز ڈسٹرکٹ ویسٹ کاپولیس اسٹیشن سرجانی رہا،گرفتارمنشیات فروش اقبال کی والدہ آمنہ پنو نے بتایا کہ طلائی زیورات اور جائیداد کی فروخت کے بعد رقم اکٹھی کی گئی مذکورہ خاتون نے بتایا کہ رقم کی وصولی میں اے ایس آئی ملک محمد عامر اس کا بھائی شفیق اور نیو کراچی صنعتی ایریا تھانے میں تعینات ولید کردار اداکرتارہا،پولیس ذرائع کے مطابق گرفتار ملزم اقبال عرف حضور بخش 11 سے زائد مقدمات پہلے سے درج ہیں اہل خانہ کے مطابق اے ایس آئی عامر نے پہلی قسط 8لاکھ پھر 12 اور آخری قسط میں 10لاکھ روپے وصول کئے،اے ایس آئی عامر کی تاوان کی رقم وصولی کی خفیہ ویڈیو وضاحت نیوز نے حاصل کرلی،یاد رہے کہ بدنام زمانہ تھانیدار نیو کراچی صنعتی ایریا یونس خٹک ماضی میں بھی منشیات فروشوں کی سرپرستی میں مرتکب اور میڈیا کی زینت بنتے رہے ہیں جس کی تصدیق گودھرا کے بدنام زمانہ گٹکا ماوا فروش سراج چونچلا نے متعدد دفعہ کی ہے ایک بیان میں سراج چونچلا نے یہ بھی کہا کہ تھانیدار یونس خٹک نے جعلی پولیس مقابلے میں غیر ذمہ دار شخص کو تاجو منشیات فروش بنا کر قتل کیا تھا جس کے بعد مقتول کے اہل خانہ کی جانب سے جھوٹے پولیس مقابلے میں ملوث تھانیدار کے خلاف کارروائی کی درخواست عدالت سے کی گئی تھی جس پر مذکورہ تھانیدار نے سراج چونچلا کی مدد سے کیس کے گواہان کو خرید لیا تھا تاہم اس بار مذکورہ تھانیدار نے پرانی روایت پر قائم رہتے ہوۓ منشیات فروش اقبال عرف حضور بخش کے اہل خانہ کو مذکورہ ملزم کی زندگی کا لالچ دے کر 30 لاکھ روپے کی رقم بصورت تاوان اور کیس میں نرمی کی غرض سے وصول کر لی ہے ذرائع بتاتے ہیں کہ ڈی آئی جی ویسٹ مذکورہ تھانیدار کی سرگرمیوں سے نالاں نہیں ہیں سب کچھ جانتے ہوۓ بھی کماؤ پوت کے خلاف کاروائی سے گریزاں ہیں ذرائع نے بتایا کہ مذکورہ تھانیدار ڈی آئی جی ویسٹ زون کی سرزنش سے بچنے کیلئے ڈی آئی جی ویسٹ کے قریب ترین پولیس افسر کو رشوت دیتا ہے جس کی بنیاد پر ہمیشہ سرزنش سے آزاد قرار دے دیا جاتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں: