ایم کیو ایم کا ہنگامی اجلاس طلب، ممکنہ فیصلہ کیا ہوسکتا ہے؟ جانیے

کراچی: ترجمان ایم کیوایم پاکستان کے مطابق کنوینر ایم کیو ایم پاکستان ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے تمام سینیٹرز، وزراء ، ایم این ایز اور اراکین اسمبلی کو بروز اتوار کو کراچی میں ہنگامی طور پر پہنچنے کی ہدایت جاری کردی۔

ایم کیو ایم کنونیئر نے ہدایت کی کہ تمام اراکین قومی و سینیٹ و صوبائی اسمبلی فوری طور پر اپنی تمام مصروفیات ترک کرکے بروز اتوار کراچی پہنچ جائیں۔

ایم کیو ایم کی جانب سے اتوار کو اہم ترین ہنگامی اجلاس متوقع ہے۔

ذرا ئع کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم پاکستان کی قیادت نے اتوار کو اجلاس با ہمی مشاورت طلب کیا ہے کیو نکہ اب تک حکومت کی جانب سے کئے گئے معاہدوں پر عمل در آمد نہیں ہو رہا ہے لہذا اب وقت تیزی کے ساتھ گزر ر ہا ہے حکومت کو تمام گزارشات کی گئی ہے لیکن ان عمل در آمد نہیں ہو رہا ہے۔ ذرا ئع کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم سے معاہدے کئے گئے ان میں چند ایسے مطالبات جن کو صرف 15 منٹ میں بھی حل کیاجا سکتا ہے لیکن ان کو لٹکا یا جا رہا ہے طول دیا جا رہا ہے جس پر ایم کیو ایم کی قیادت کی جانب سے بڑے فیصلے کا امکان ظا ہر کیا جا رہا ہے۔

ذرا ئع کا کہنا ہے کہ اجلاس ایم کیوایم نے اس دن طلب کیا جس دن ضمنی الیکشن ہے اسی دن اجلاس اور اہم فیصلے کئے جا نے کا امکان ہے۔

زرا ئع کا کہنا ہے کہ اگر ایم کیوایم کی جانب سے بڑا فیصلہ آنے کی صورت ملکی سیا ست میں ڈرامائی تبدیلی آنے کا امکان بھی ظاہر کیا جا رہا ہے۔

زرا ئع کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم اجلاس طلب کر نے کاطرز عمل 6سال بعد دیکھنے میں آیا جس میں تمام اراکین اسمبلی سینٹیرز کو تمام مصروفیات ترک کے فوری طور پر مر کز پہنچے کی ہدایت جاری کی گئی ہے۔

امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ ایم کیو ایم حلقہ این اے 237 اور حلقہ این اے 239 پر یونے والے ضمنی انتخابات پر بائیکاٹ کا اعلان کرسکتی ہے جبکہ یہ بھی ممکن ہے کہ بلدیاتی انتخابات سے بھی بائیکاٹ کا اعلان کردیا جائے۔

ذرائع نے یہ بھی بتایا ہے کہ وفاق کا ساتھ چھوڑنے کا کوئی امکان نہیں ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: