سرفراز احمدنےجب تاریخ رقم کی;سیدمحبوب احمدچشتی

دنیائے کرکٹ  میں شاندار واپسی سے تاریخ رقم کرنے والے سرفراز احمدنے شاہدآفریدی سمیت شائقین کرکٹ کو دھوکہ نہیں دیا لالا کے انتخاب کو غلط ثابت نہیں ہونے دیا

پاکستان کو پہلی مرتبہ چمپیئینز ٹرافی دلوانے والے سرفراز احمد کی دنیائے کرکٹ میں ایک مرتبہ پھر دھوم مچ گئی، نیوزی لینڈ سے ایک اور سیریز ہارتے ہارتے سرفرازاحمد کی کوششوں سے ڈرا ہو گئی،

چمپئینز ٹرافی دلوانے والا کپتان چار سال تک گرائونڈز میں اڑتی دھول دیکھنے والا  اور کھلاڑیوں کو پانی پلانے کے بعد جب ٹیسٹ کرکٹ میں واپس آیا تو صبر جیسے طوفان میں ڈھل گیا شاہدخان آفریدی نے سرفراز احمد کوسلیکٹ کرکے شہرقائد کے دلوں کو جیت لیا

کرکٹ میں دوسال سال س زائد باہر رہنے کے باوجودایسی واپسی کرکٹ کی تاریخ میں بہت کم دیکھی گئی ہے جہاں مسلسل کارکردگی سے یہ بات ثابت ہوئی کہ ان کے چار سال برباد کر دئیے گئے اگر وکٹ کیپر کی حیثیت سے نہ سہی انہیں بیٹسمین کی حیثیت سے ٹیم میں شامل رکھا جاتا تو ٹیسٹ اور ون ڈے کی کئی شکست، فتوحات میں تبدیل ہوسکتی تھیں

رفراز احمد کی حالیہ سنچیری کو نہ صرف دنیائے کرکٹ بلکہ انڈیا میں بھی عظیم الفاظ سے سراہا جارہا ہے یہاں تک ہورہا ہے کہ انہیں وی لاگز کے ذریعے سراہا جارہا ہے کراچی سے تعلق رکھنے والے سرفراز احمد نے ہمیشہ اپنی اہلیت کو ثابت کیا جب ان کی ضرورت پڑی انہوں نے دھوکا نہیں دیا،

کرکٹ ماہرین انہیں آج بھی ٹیسٹ اور ون ڈے کا گیم چینجر مانتے ہیں البتہ ٹی ٹوئینٹی کے حوالے سے انہیں بہتر تصور نہیں کیا جاتا لیکن پی ایس ایل کے کچھ میچز میں ان کی کارکردگی دیکھ کر یہ انکار کرنا بھی ممکن نہیں کہ وہ ٹی ٹوینٹی کے پلئیرز نہیں ہیں

لیکن اس بات کو مان بھی لیا جائے کہ وہ ٹی ٹوینٹی کے اچھے پلئیر نہیں ہیں تو یہ بات تو حقائق پر مبنی ہے کہ ٹیسٹ اور ون ڈے کے وہ مستند بیٹسمین ہیں لہذز ان کا جتنا بھی کیرئیر باقی ہے اس میں انہیں دونوں طرز کی کرکٹ سے دور نہیں کرنا چاہیئے 2023ء  میں عالمی کپ ہونے جارہا ہے ون ڈے کے ورلڈ کپ میں تجربہ کار کھلاڑی کے طور پر سرفراز احمد کی شرکت لازمی ہونی چاہیئے یاد رہے کہ 2015ء  کے ورلڈ کپ میں سرفراز احمد نے ریکارڈ ساز اننگز کھیل کر یہ لقب اپنے نام کروایا تھا کہ “سرفراز دھوکا نہیں دے گا ” رمیز راجہ نے تعصبی چشمہ پہن کر سرفراز کو ریٹائرمنٹ لینے کا کہہ دیا تھا

آج وہ پی سی بی سے باہر ہیں لیکن سرفراز احمد آج دوبارہ اسٹار بن کر سامنے آیاہے  واقعی قدرت بہادوروں کاساتھ دیتی ہے  نیوزی لینڈ کے کھلاڑیوں نے محض اس لئے داد دی کہ وہ ان کے منہ سے فتح نکال کر لے گیا،

شاہد خان آفریدی حقیقی طور پر بڑے کھلاڑی اور کرکٹ کو سمجھنے والے کئی طرم خانوں سے بہتر ثابت ہو رہے ہیں لا لا کی یہ جارحانہ سلیکشن پر سرفراز احمد تاریخ رقم کرگئے کیونکہ وہ اس بات کو اہمیت دیتے دکھائی دے رہے ہیں کہ پاکستان کرکٹ کیلئے کیا بہتر ہے

انہیں پاکستان کرکٹ کی پرواہ ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ پاکستان کا نام کرکٹ کے لحاظ سے دنیا کے ہر گرائونڈ میں گونجے انہوں نے کھلاڑیوں کو اہلیت پر چننے کا جو فیصلہ کیا ہے اور جو ان کا وژن ہے اگر وہ کسی سیاست کی نذر نہ ہوا تو بہت ممکن ہے کہ 2023ء  کا ورلڈ کپ 1992  کے بعد پاکستان کے حصے کا دوسرا ورلڈ کپ ثابت ہوکیونکہ اب ان کی نظریں ایک اور میچ ونر محمد عامر کی واپسی پر لگ چکی ہیں اور وہ تیزی سے ٹیسٹ، ون ڈے اور ٹوینٹی ٹوینٹی کا وننگ کمبینیشن تیار کر رہے ہیں اور اس کا پہلا اظہار انہوں نے سرفراز احمد کی ٹیسٹ اور ممکنہ طور پر ون ڈے کرکٹ میں واپسی سے کردیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں: