زلزلے سے ہلاکتیں 50 ہزار سے تجاوز، ترکیہ میں گھروں کی تعمیر شروع

انقرہ ، ٹوکیو، پشاور : ترکیہ اور شام میں رواں ماہ آنے والے تباہ کن زلزلے سے ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 50 ہزار سے تجاوز کر گئی جبکہ ترکیہ میں گھروں کی تعمیر نو کا کام شروع کر دیا گیا۔

ڈیزاسٹر اینڈ ایمرجنسی مینجمنٹ اتھارٹی (اے ایف اے ڈی) نے بتایاترکیہ میں 44 ہزار سے زائدافراد جا ں بحق ہوئے جبکہ شام میں ہلاکتوں کی تعداد تقریبا 6 ہزارہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق6 فروری کو آنے والے تباہ کن زلزلے کی شدت 7.7 تھی جس کے بعد 7.6 شدت کا ایک اور زلزلہ آیا جبکہ زلزلے کے بعد تقریبا 9 ہزار آفٹر شاکس ریکارڈ کیے جاچکے ہیں۔

ترکیہ میں زلزلے سے ایک لاکھ 73 ہزار عمارتیں تباہ ہوئیں اور متاثرہ علاقوں سے تقریبا 5 لاکھ 30 ہزار سے زائد افراد نے نقل مکانی کی ہے۔ حکام کا کہنا ہے زلزلے کے نتیجے میں مجموعی طور پر 1.9 ملین افراد عارضی طور پر مہاجر کیمپوں میں زندگی گزار رہے ہیں۔اقوام متحدہ کے ڈویلپمنٹ پروگرام (یو این ڈی پی) کے اندازوں کے مطابق تباہ کن زلزلے کے بعد 15 لاکھ افراد بے گھر ہو گئے جبکہ 5 لاکھ نئے گھر تعمیر کرنے کی ضرورت ہوگی۔

جاپان نے ترکیہ اور شام کے زلزلہ زدگان کیلئے تقریبا 27 ملین ڈالر کی ہنگامی انسانی امداد کا اعلان کیا ہے۔جاپان نے ایک بین الاقوامی امدادی فنڈ کے ذریعے شام کو 7 ملین ڈالر کی امداد فراہم کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔ترک خبر ایجنسی کے مطابق ہفتے کے روز ترکیہ کے وسطی نگدے صوبے میں 5.3شدت کے شدید زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے۔ترک ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایجنسی نے کہا زلزلہ7کلومیٹر کی گہرائی میں تھا اور مقامی وقت کے مطابق ضلع بور میں دوپہر ایک بجے کے بعد آیا جس کے نتیجے میں ابھی تک کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ہے۔

ادھر خیبرپختونخوا کے سرکاری ملازمین ایک دن کی تنخواہ ترکیہ اور شام کے زلزلہ متاثرین کیلئے دیں گے۔ اس حوالے سے جاری ہونے والے اعلامیے کے مطابق گریڈ 17 اور اس سے اوپر اسکیل کے ملازمین ایک دن کی تنخواہ وزیراعلیٰ ریلیف فنڈ میں جمع کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: