انفارمیشن ٹیکنالوجی کا شعبہ کامیابی و خوشحالی کی کنجی ہے ، امین الحق

کراچی: فاقی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی و ٹیلی کمیونیکیشن سید امین الحق نے کہا ہے کہ طلبہ و طالبات کیلئے انفارمیشن ٹیکنالوجی کا شعبہ کامیابی اور خوشحالی کی کنجی بن سکتا ہے، گذشتہ 4 برس میں پاکستان میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے شعبے کو نمایاں وسعت دی، 33 لاکھ مرد و خواتین کو ڈی جی اسکلز پروگرامز سے فری لانسگ کی تربیت فراہم کی، فری لانسرز نے آن لائن سروسز سے 300 ملین ڈالرز سے زائد رقم کمائی، اسٹارٹ اپ ایکوسسٹم کے تحت 2022 میں 390ملین ڈالرزکی سرمایہ کاری حاصل کی گئی۔

جمعے کو کراچی میں نیشنل یونیورسٹی آف کمپیوٹر اینڈ ایمرجنگ سائنسز (فاسٹ) کے زیر اہتمام دو روزہ انٹر یونیورسٹی ٹیکنالوجی مقابلے و روزگار نمائش کی اختتامی تقریب سے بحیثیت مہمان خصوصی اپنے خطاب میں کہی۔

وفاقی وزیر آئی ٹی نے فاسٹ یونیورسٹی کےتحت انٹر یونیورسٹی مقابلوں اورروزگارنمائش کے انعقاد پر یونیورسٹی انتظامیہ کی تعریف کی۔ جس میں 20 سے زائد کمپنیوں نے جامعات سے فارغ التحصیل طلبہ و طالبات کو پرکشش روزگار کی آفرز دی گئیں۔ جبکہ انفارمیشن و سائنس و ٹیکنالوجی کے مختلف شعبوں میں نمایاں کارنامے انجام دینے والے طلبہ و طالبات میں انعامات بھی تقسیم کیئے گئے۔

اپنے خطاب میں سید امین الحق کا کہنا تھا کہ ہماری نوجوان نسل کی صلاحیتوں اور قابلیت کی دنیا معترف ہوتی جارہی ہے، یقین دلاتا ہوں کہ وقت دورنہیں کہ آئی ٹی ہنرمندوں کیلئے روزگاردینے والی کمپنیوں کی طویل قطار ہوگی، نوجوان اپنی تخلیقی صلاحیتوں اورآئی ٹی قابلیت کو بڑھائیں،ڈیجیٹل دنیا میں ہرروزکسی نہ کسی ایپلی کیشن، پورٹل، ویب سائٹ اور آرٹیفیشل انٹیلی جنس پر مبنی ٹیکنالوجیکل ایپس کی صورت میں ایک نیا اضافہ ہورہا ہے، پاکستانی نوجوان بھی اپنی ایجادات سے دنیا کو بتائیں یہ ملک اور اس کے لوگ انفارمیشن ٹیکنالوجی میں کسی سے کم نہیں، پہلے لوگ آئی ٹی کا نام جانتے تھے، اب سمجھتے بھی ہیں اور اس سے منسلک بھی ہورہے، ہر تیسرا فرد فری لانسنگ، ای کامرس اور آن لائن ورکنگ کی بات کرتا نظر آئے گا، اپنے نوجوان ہنرمندوں کے تعاون سے آئی ٹی سروسز ایکسپورٹ کو 15 ارب ڈالرزتک لے جانا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ ملک کےکونےکونےمیں نیٹ ورکنگ،براڈ بینڈسروسزی کیلئےدرجنوں منصوبے زیرتکمیل ہیں، جن سے شہروں کے ساتھ دیہی اور پسماندہ علاقوں کے نوجوانوں کو بھی ڈیجیٹل دنیا سے منسلک ہونے کا موقع فراہم ہورہا ہے۔ اس بات کا ادراک سب کو ہے کہ ملک کی معیشت کے استحکام کیلئے آئی ٹی انڈسٹری کا فروغ ناگزیرہے ہم یونیورسٹیز کی سطح پر انفارمیشن ٹیکنالوجی کے جدید کورسز کے اجراء، سمیت ڈیجیٹل پاکستان ویژن کی تکمیل کیلئے بیک وقت عالمی معیار کی تربیت،فری لانسنگ و اسٹارٹ اپس ایکو سسٹم پالیسیز، سہولیات کی فراہمی، براڈ بینڈ سروسز نیٹ ورکنگ میں توسیع ، موبائل مینوفیکچرنگ سمیت بیک وقت متعدد محاذوں پر کامیابی سے کام کررہے ہیں۔ بہت جلد پاکستان عالمی سطح پر ڈیجیٹل حب کی حیثیت سے پہچانا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: