حکومت سے مذاکرات کون کرے گا ؟:عمران خان نے واضح کردیا !

لاہور : چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے کہا ہے وہ حکومت کے ساتھ مذاکرات میں نہیں بیٹھیں گے اگر بات چیت ہوئی تو پارٹی کے دیگر اراکین کریں گے جبکہ فواد چوہدری نے کہا ہے عدالتی حکم پر عمل درآمد نہ ہوا تو سپریم کورٹ کل ملک کے ایک اور وزیراعظم کو فارغ کر دیگی ۔
ایک انٹرویو دیتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ جن کو چور اور کرپٹ کہتا ہوں ان کے ساتھ نہیں بیٹھوں گا ، اس وقت ملک کا سب سے بڑا مسئلہ 90 روز میں انتخابات ہیں، ابھی انتخابات نہیں ہوئے تو اکتوبر میں انتخابات کے امکانات کم ہیں، اگر مذاکرات ہوئے تو صرف الیکشن کے معاملے پر ہوں گے، انتخابات کی طرف نہیں جاتے تو پھر مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں، میرا کسی سے کوئی رابطہ نہیں تاہم انتخابات پر بات کرنے کو تیار ہوں ، اپنے مفادات کیلئے سپریم کورٹ کو تقسیم کرنا نواز شریف کی پرانی روش ہے، سپریم کورٹ کا فیصلہ نہ ماننے کا مطلب ہے کہ ملک میں آئین و قانون ختم ہوگیا لیکن پوری قوم سپریم کورٹ کے ساتھ کھڑی ہوگی ، اگر نوے دن میں نہیں ہوتے تو پھر اکتوبر میں کیوں ہوں؟ ۔
انہوں نے کہاکہ پھر کہیں گے اگلے سال بھی کیوں ہوں؟ پھر تو جو طاقت ور فیصلہ کرے گا وہی ہو گا، سپریم کورٹ کے ججز کی حالیہ تقسیم کے پیچھے نواز شریف کا ہاتھ ہے ، اس نے پہلے بھی 1997 میں سپریم کورٹ کو تقسیم کیا تھا، اس کی بیٹی ججز کے پیچھے بیانات دے رہی ہے، موجودہ فوجی قیادت کے ساتھ کوئی رابطہ نہیں ہوا تاہم اگر انتخابات کے حوالے سے بات ہو تو وہ کسی سے بھی کرنے کو تیار ہیں۔عمران نے سکیورٹی اداروں پر الزام لگایا کہ وہ ان کے کارکن اغوا کر کے ان پر تشدد کر رہے ہیں ۔
ان کاکہناتھاکہ ہم پر جنرل باجوہ کے دور سے زیادہ سختی کی جا رہی ہے،امید یہ کر رہے تھے کہ جب جنرل باجوہ جائے گا، تو تبدیلی ہو گی لیکن کوئی تبدیلی نہیں ہوئی، وہی پالیسیز چل رہی ہیں بلکہ اس سے بھی کئی شدت پکڑ رہی ہیں ،جنرل باجوہ نے امریکیوں کو بھی میرے خلاف کیا تھا۔
عمران سے قائد حزب اختلاف سندھ حلیم عادل شیخ و سابق گورنر سندھ عمران اسماعیل نے زمان پارک میں اہم ملاقات کی، ملاقات میں عمران خان نے پی ٹی آئی رہنمائوں کو رولز آف لا اور آئین کی بالادستی کے لئے تمام سیاسی جماعتوں و سول سوسائٹی سے رابطے کرنے کا ٹاسک دیتے ہوئے کہاکہ موجودہ صورتحال میں عدلیہ پر حملہ کیا جارہا ہے ، آئین کی بالادستی اور ملک میں رولز آف لا کے قیام کے لئے پوری قوم کو اکٹھا کرنا ہے ۔
حلیم عادل شیخ نے کہا سندھ کی سیاسی، مذہبی، قوم پرست جماعتوں اور سول سوسائٹی سے بھی رابطہ کیا جائے گا ۔ عمران نے گوجرانولہ ڈویژن کے رہنماؤں اور کارکنان کے ساتھ افطار کیا ، افطار تقریب میں انہوں نے کارکنان کو آئندہ کے سیاسی لائحہ عمل کے حوالے سے آگاہ کیا ۔
کراچی میں میڈیا سے گفتگو میں شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ بھٹو کا بنایا ہوا آئین زرداریوں نے برباد کر دیا ہے، بھٹو کا نواسہ بھٹو کے آئین پر حملہ آور ہے، (ن) لیگ نے آئین پر حملے کا فیصلہ کرلیا ہے، رانا ثناء اللہ نے ججز پر ڈائریکٹ حملہ آور ہونے کی کوشش کی ہے ، آج 73 کے آئین کو توڑنے کی کوشش کی جا رہی ہے ، 1997ء کی تاریخ دہرانے کی کوشش کی جا رہی ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: