مہاجر حقوق کے دعویدار ڈراکولہ کی شکل اختیار کرگئے ہیں، ڈاکٹر سلیم حیدر

کراچی : مہاجر اتحاد تحریک کے چیئرمین ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہا ہے کہ کراچی سمیت سندھ کے مہاجروں کو سیاسی اختیار دیا جائے ، مثبت اور اہل مہاجر قیادت کی حوصلہ افزائی کی جائے ، بدقسمتی سے ہر مرتبہ کی طرح اس مرتبہ بھی پرانی بوتل میں نئی شراب ڈالی جارہی ہے ۔ مہاجر نوسربازوں اور پیداگیروں سے بیزار ہوچکے ہیں کیونکہ مہاجر نام پر سیاست کرنے والے مفاد پرستوں نے سب سے زیادہ نقصان مہاجروں کو پہنچایا ، آج مہاجر بند گلی میں کھڑے ہیں ان کی سوچنے وسمجھنے کی صلاحیتیں بھ جواب دے چکی ہیں ۔ ایک طرف پیپلزپارٹی مہاجروں پر غلامی مسلط کررہی ہے تو دوسری طرف مہاجر حقوق کے دعویدار جوکہ ڈراکولہ کی شکل اختیار کرگئے ہیں وہ 35سال سے ہر بار نیا چورن لے آتے ہیں ۔

ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہاکہ آج مہاجروں کو سنجیدہ ، بردبار اور اہل قیادت ہی اس بحرانی کیفیت سے نکال سکتی ہے۔ 35سال کی سیاست میںمہاجر حقوق حل ہونا تو درکنار مہاجر زیادہ مسائل اور گرداب میں پھنس گئے ہیں۔ اس لئے اب بھی وقت ہے کہ اگر صحیح فیصلہ نہ کیاگیا اور مہاجر دانشور و اکابرین نے اپنی قوم اور نسل کی بقاء کیلئے صحیح لوگوں کو سپورٹ نہ کیا تو پھر ان کی داستاں بھی نہ ہوگی داستانوں میں۔

ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہاکہ پچھلے 10 سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے مہاجر نوجوانوںکو نوکری دینا تودرکنار نوکریوں سے نکالنے کا سلسلہ جاری ہے۔ آج کراچی جیسے شہر میں مہاجر خود کو اجنبی اور تنہا محسوس کررہے ہیں جس کی تمام تر ذمہ داری ایم کیوایم اور اس سے وابستہ مفاد پرست قیادت پر ہے ۔

ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہاکہ اسٹیبلشمنٹ کے ہاتھوںمیں کھیلنے والوں نے کبھی بھی مہاجروں کے مفادات کیلئے کام نہیں کیا بلکہ اقتدار آتے ہی وہ متحدہ بن گئے اور سارے زمانے کی ٹھیکیداری شروع کردی ۔

ڈاکٹر سلیم حیدر نے کہاکہ اپنی صفوں میں غیر مہاجروں کو داخل کرکے انہیں نوازا گیا ۔ آج ایک بھی غیر مہاجر جو برسہا برس سے ان سے مراعاتیں لیتے رہے ان کے ساتھ نہیں ہیں جو اس بات کا ثبوت ہے کہ ان کے غلط فیصلوں کے نتیجے میں مہاجر قوم اپنے حصے سے بھی محروم ہوگئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: