صحافیوں کی جبری برطرفیاں، نیوز ایکشن کمیٹی کا عدالت سے رجوع کرنے کا اعلان

صحافیوں کی جبری برطرفیاں،نیوز ایکشن کمیٹی کا عدالت سے رجوع کرنے کا فیصلہ
فارم کا اجراء کردیا گیا،متاثرہ صحافی کوائف نیوز ایکشن کمیٹی کو جمع کراسکتے ہیں
آئینی درخواستوں میں میڈیا مالکان اور اے پی این ایس کو فریق بنایا جائے گا

نیوز ایکشن کمیٹی نے صحافیوں کی جبری برطرفیوں اور تنخواہوں میں کٹوتی کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ اس ضمن میں ایک فارم کا اجراء کیا گیا ہے جس میں متاثرہ صحافی اپنے کوائف نیوز ایکشن کمیٹی کے پاس جمع کراسکتا ہے۔ یہ اہم فیصلہ چیئرمین اطہر خان کی رہائش گاہ پر ایکشن کمیٹی کے ہنگامی اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں کنوینر عمیر علی انجم نے جبری برطرفیوں اور تنخواہوں میں کٹوتی سمیت دیگر امور قانونی ماہرین سے ہونے والی مشاورت سے شرکاء کو آگاہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت درجنوں کی تعداد میں متاثرہ صحافی ایکشن کمیٹی سے رابطہ کرچکے ہیں اس لیے اب ضروری ہوگیا ہے کہ اس معاملے کو عدالت میں لے کر جایا جائے اور کوشش کی جائے کہ زیادہ سے زیادہ متاثرین کو ان کا حق دلوایا جائے۔ چیئرمین اطہر خان کی تجویز پر فوری طور ایک فارم جاری کردیا گیا ہے جس میں متاثرہ صحافی اپنے کوائف نیوز ایکشن کمیٹی کے پاس جمع کراسکتے ہیں۔ پہلے مرحلے میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ کراچی اور سندھ کے صحافیوں کے لیے سندھ ہائی کورٹ سے رجوع کیا جائے گا اور دوسرے مرحلے ملک کے دیگرصحافیوں کے لیے متعلقہ ہائی کورٹس میں آئینی درخواستیں دائر کی جائیں گی جن میں میڈیا مالکان اور اے پی این ایس کو فریق بنایا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: