اب 100 روپے کے موبائل کارڈ پر کتنے پیسے کٹیں گے؟ پی ٹی اے کی وضاحت جاری

اسلام آباد: پاکستان ٹیلی کمیونیکشن اتھارٹی (پی ٹی اے) نے سوشل میڈیا پر موبائل بیلنس لوڈ کرنے پر پیسوں کی کٹوتی کے حوالے سے چلنے والی خبروں پر اہم وضاحت پیش کردی۔ مذکورہ خبروں کے بعد صارفین بہت زیادہ پریشانی کا شکار تھے۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر خبریں زیرگردش تھیں کہ رواں سال کے آغاز کے بعد موبائل کمپنیز کی جانب سے 100 روپے کے لوڈ یا کارڈ ری چارج کرنے پر 24 روپے کٹوتی کی جائے گی اور صارفین کے پاس صرف 76 روپے بیلنس آئے گا۔

اس حوالے سے پاکستان ٹیلی کمیونیکشن اتھارٹی نے سوشل میڈیا پر زیر گردش خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ موبائل فون آپریٹرز ریچارج یا ری لوڈ پر سپریم کورٹ آف پاکستان کی جانب سے اپریل 2019 سے ٹیکس کی بحالی کے بعد صرف ود ہولڈنگ ٹیکس اور جنرل سیلز ٹیکس وصول کررہے ہیں۔ پی ٹی اے کے مطابق 100 روپے کے ری چارج پر 12.5 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس کی کٹوتی کے بعد صارف کو 88.88 روپے وصول ہوتے ہیں جبکہ 19.5 فیصد جی ایس ٹی کا اطلاق فی کال، ایس ایم ایس اور ڈیٹا کے استعمال پرہوتا ہے۔

پی ٹی اے کا کہنا ہے کہ صارف کی جانب سے مکمل بیلنس کے استعمال کے بعد جی ایس ٹی کی مد میں 14 روپے 50 پیسے لاگو ہوتے ہیں، صارفین کو ٹیکسز کے حوالے سے صحیح آگاہی نہ ہونے کے باعث یہ تاثر ملتا ہے کہ زیادہ پیسوں کی کٹوتی کی جاتی ہے۔ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کے مطابق کال سیٹ اپ چارجز 15 پیسے فی کال مقرر کی گئی ہے تاہم اس سے زیادہ وصولی پر کارروائی کی جائے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: