گینگ وار کا راج، گلستان جوہر کو لیاری بننے سے بچایا جائے، علاقہ مکین

کراچی: لیاری گینگ وار کے خلاف آپریشن کے بعد پی پی حکومت کے تعاون سے گینگ وار کارندے رابعہ سٹی سمیت گلستان جوہر کے مختلف فلیٹس میں روپوش، گلستان جوہر میں گینگ وار منظم ہوگئی۔

گلستان جوہر کے مکینوں نے گینگ وار کے بڑھتے ہوئے اثرورسوخ پر تشویش کا اظہار کیا ہے جبکہ رینجرز سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان لوگوں کے خلاف سخت کارروائی کریں۔

علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ پولیس ملزمان کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے انہیں تحفظ فراہم کرتی ہے اور اگر کوئی ملزم پکڑا بھی جائے تو پی پی ڈسٹرکٹ ایسٹ کے صدر کے ایک فون پر رہا کردیا جاتا ہے۔

گزشتہ دنوں جوہر موڑ کے قریب واقع انتہائی مصروف علاقے میں قائم رہائشی پروجیکٹ میں گینگ وار کارندوں نے گھر میں گھس کر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں باپ بیٹا جاں بحق جبکہ کمسن بچی زخمی ہوئی تھی۔

ہزاروں لوگوں کی موجودگی میں مسلح افراد آئے اور اتنی بڑی واردات کرکے چلے گئے، علاقہ مکینوں نے الزام عائد کیا ہے کہ پولیس وقوعہ سے تھوڑے فاصلے پر لگے پھل فروشوں سے بھتہ لینے میں مصروف تھی اور واردات کی اطلاع کے باوجود فوری طور پر جائے وقوعہ نہیں پہنچی۔

Image result for lyari cheel chowk

گلستان جوہر پر امن علاقہ تھا مگر اب سندھ حکومت کے نامزد کردہ افسران کی پشت پناہی اور مدد سے گینگ وار کے کارندے علاقے میں تیزی سے منظم ہوتے جارہے ہیں، گلستان جوہرمیں قتل ہونیوالے محمدعلی بلوچ کے بیٹے کاشف بلوچ کے مارے جانے کادعوی گینگ وارسرغنہ عذیربلوچ نے بھی اس وقت کیاتھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: