گجرات میں ہندو مسلم فسادات، 4 مسلمان شہید

نئی دہلی: بھارتی گجرات میں گائے کے بچھڑے کا کٹا ہوا سر ملنے کے بعد ہندو مسلم فسادات شروع ہوگئے، مشتعل ہندو انتہا پسندوں نے کئی  مسلمانوں کی دوکانوں کو تباہ کر دیا۔آخری اطلاعات موصول ہونے تک ان فسادات میں 4 سے زائد مسلمان شہید ہوچکے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی ریاست گجرات میں گائے کے بچھڑے کا کٹا ہوا سر ملنے کے بعد ہندو انتہاء پسند بے قابو ہوگئے اور انہوں نے مسلمانوں پر حملے شروع کردیے۔ گجرات میں شروع ہونے والے فسادات شروع میں ہندو انتہا پسندوں نے کئی دکانوں کو تباہ کر دیا جبکہ پولیس نے انتہا پسند ہندوﺅں پر قابو پانے کیلئے آنسو گیس کا استعمال اور لاٹھی چارج کیا ہے۔

بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق واقعہ گجرات کے شہر سورت کے نواحی علاقے گودودارا میں پیش آیا جہاں ایک سڑک سے بچھڑے کا کٹا ہوا سر ملنے کے بعد انتہا پسند ہندو مشتعل ہو گئے، مشتعل افراد نے کئی دکانوں میں توڑ پھوڑ کی، کاروباری مراکز بند کرا دئیے اور پولیس پر پتھراﺅ کیا۔

مقامی پولیس حکام کے مطابق پولیس نے مشتعل افراد پر قابو پانے کیلئے لاٹھی چارج کیا اور آنسو گیس کے 20 شیل فائر کئے۔ پولیس حکام کے مطابق صورت حال پر قابو پا لیا گیا ہے اور علاقے میں گشت بڑھا دیا گیا ہے۔ پولیس نے کئی افراد کو حراست میں لے کر تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ سماء

اپنا تبصرہ بھیجیں:

اپنا تبصرہ بھیجیں