ایسے پتھر کو اب نہ خدا کیجئے، غزل’طارق خان

عزل

جفاوں کے بدلے، وفا کیجئے ۔۔۔

برا وہ کریں تو، بھلا کیجئے ۔۔۔

یہ محبت کا سودا، عجب چیز ہے ۔۔۔

جو گریزاں ہے، اس سے ملا کیجئے ۔۔

خود بدلتا ہو جو بادباں کی طرح ۔۔۔

ایسے بزدل کو کیا رہنما کیجئے ۔۔

اپنے ہاتھوں سے تم نے تراشا جسے ۔۔۔

ایسے پتھر کو اب نہ خدا کیجئے ۔۔۔

وہ ستمگر ہیں، یہ ہے ان کی روش ۔۔

آپ ان سے نہ طارق گلہ کیجئے ۔۔۔


محمد طارق خان

8 اپریل 2009 ۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں: